مٹی سے لامحدود بجلی تیار کرنے والا آلہ تیار

سائنس دانوں نے ایک نئی قسم کا فیول سیل تیار کیا ہے جو مٹی سے لامحدود بجلی فراہم تیار کرسکتا ہے۔
امریکہ کی نارتھ ویسٹرن یونیورسٹی کی ایک ٹیم کا کہنا ہے کہ کتاب کے سائز کے اس یونٹ کو کھیتی باڑی میں استعمال ہونے والے سینسرز کے ساتھ ساتھ انٹرنیٹ آف تھنگز (IoT) میں ریموٹ ڈیوائسز کے لیے استعمال کیا جا سکتا ہے۔
یہ ٹیکنالوجی مٹی کے اندر قدرتی طور پر پیدا ہونے والے بیکٹیریا سے بجلی پیدا کرتی ہے، جو زہریلی اور آتش گیر بیٹریوں کا ایک پائیدار اور قابل تجدید متبادل ہے۔
نارتھ ویسٹرن یونیورسٹی میں سول اور ماحولیاتی انجینئرنگ کے ایک ایسوسی ایٹ پروفیسر جارج ویلز نے بتایا کہ ’یہ جرثومے ہر جگہ موجود ہیں، اور یہ پہلے ہی ہر جگہ مٹی میں رہتے ہیں‘۔
انہوں نے کہا کہ ’ہم ان سے بجلی حاصل کرنے کے لیے بہت آسان انجنیئرڈ سسٹم استعمال کر سکتے ہیں۔ ہم اس توانائی سے پورے شہروں کو بجلی نہیں دیں گے۔ لیکن ہم عملی، کم طاقت والے ایپلی کیشنز کو ایندھن دینے کے لیے توانائی کی مخصوص مقدار حاصل کر سکتے ہیں‘۔
مٹی پر مبنی مائکروبیل فیول سیل (MFC) ایک 113 سال پرانی ٹیکنالوجی پر مبنی ہے جسے سب سے پہلے برطانوی ماہر نباتات مائیکل کریس پوٹر نے تیار کیا تھا، جو مائکروجنز سے کامیابی کے ساتھ بجلی پیدا کرنے والے پہلے شخص تھے۔
اس کی پہلی تجارتی ایپلی کیشنز تجویز کرنے میں 21 ویں صدی تک کا عرصہ لگا۔
فوسٹرز بریونگ نے بریوری کے گندے پانی میں خمیر کو بجلی میں تبدیل کرنے کے لیے ایک پروٹو ٹائپ کا استعمال کیا۔
اس نئے ایندھن کے سیل کا تجربہ گیلے اور خشک حالات میں ان پاور سینسرز کے لیے کیا گیا جو مٹی کی نمی کی پیمائش کرتے ہیں اور ٹچ کا پتہ لگاتے ہیں، یہ سیلز اسی طرح کی دیگر ٹیکنالوجیز کی طاقت کو 120 فیصد تک بڑھاتے ہیں۔
اس ریسرچ کی قیادت کرنے والے شمال مغربی سابق طالب علم بل ین نے کہا کہ ’انٹرنیٹ آف تھنگز (IoT) میں ڈیوائسز کی تعداد مسلسل بڑھ رہی ہے۔ اگر ہم ان کھربوں آلات کے ساتھ مستقبل کا تصور کرتے ہیں، تو ہم ان میں سے ہر ایک کو لیتھیم، بھاری دھاتوں اور زہریلے مادوں سے نہیں بنا سکتے جو ماحول کے لیے خطرناک ہیں‘۔
انہوں نے کہا کہ ’ہمیں ایسے متبادل تلاش کرنے کی ضرورت ہے جو آلات کے وسیع نیٹ ورک کو طاقت دینے کے لیے کم مقدار میں توانائی فراہم کر سکیں… جب تک کہ جرثوموں کے ٹوڑٹنے سے مٹی میں نامیاتی کاربن موجود ہے، فیول سیل ممکنہ طور پر ہمیشہ کے لیے کام کرتا رہ سکتا ہے‘۔

Views= (204)

Join on Whatsapp 1 2

تازہ ترین