’امریکی ڈالر 270 روپے میں دستیاب‘

ملک بھر میں جاری ڈالر کی ذخیرہ اندوزی، غیر قانونی ایکسچینج کمپنیوں اور حوالہ ہنڈی کے خلاف کریک ڈاؤن کے بعد صورت حال یہ ہوگئی ہے کہ لوگ اوپن مارکیٹ سے ڈالر خریدنے سے کترانے لگے ہیں، مارکیٹ میں ڈالر فروش پھل سبزی کی طرح ڈالر آوازیں لگا کر بیچ رہے ہیں لیکن کوئی خریدنے کو تیار نہیں۔
جس کا نتیجہ یہ نکلا کہ کاروباری ہفتے کے پہلے دن ہی ڈالر مزید سستا ہوگیا، جس کے بعد انٹر بینک اور اوپن مارکیٹ میں فرق بھی تقریباً ختم ہوگیا ہے۔
اسٹیٹ بینک کے مطابق انٹربینک میں ڈالر کا لین دین 301.16 روپے پر بند ہوا، جبکہ اوپن مارکیٹ میں ڈالر 297 روپے 50 پیسے کا ہوگیا۔
ایک ہفتے کے دوران اوپن مارکیٹ میں ڈالر 24 روپے سستا ہوا ہے۔
ایسے میں سینئیر پاکستانی صحافی حامد میر نے دعویٰ کیا ہے کہ ’اسلام آباد میں کوئی 280 روپے میں بھی ڈالر خریدنے کو تیار نہیں، ڈالر فروش 270 کی آوازیں لگا رہے ہیں اور عوام الناس مفت مسکراہٹیں نچھاور کرتے ہوئے آگے بڑھ جاتے ہیں‘۔
حامد میر کے مطابق ڈالر فروش شدید مشکلات کا شکار ہیں اور ان کا بہت برا انجام ہوا ہے۔

Views= (645)

Join on Whatsapp 1 2

تازہ ترین