نیسلے کی تیار کردہ بچوں کی خوراک سے متعلق چشم کشا انکشافات

اپریل 2024ء میں 265.57 بلین ڈالر کا بزنس کیا

بچوں کے غذائی معیار پر نظر رکھنے والے یورپی ادارے نے اپنی رپورٹ میں فوڈ اور مشروبات کی بڑی کمپنی ”نیسلے“ پر غریب ممالک کے خلاف امتیازی سلوک برتنے کا الزام عائد کیا ہے۔
امریکی خبر رساں ادارے ”ٹائم ڈاٹ کام“ کے مطابق زیورخ میں قائم واچ ڈاگ پبلک آئی اور انٹرنیشنل بیبی فوڈ ایکشن نیٹ ورک (IBFAN) نے ایک مشترکہ تحقیقات میں انکشاف کیا ہے کہ نیسلے ترقی پذیر اور غریب ممالک میں اپنے بنائے گئے بچوں کے دودھ اور اناج کی مصنوعات میں چینی اور شہد شامل کرتی ہے لیکن یورپی منڈیوں میں نہیں۔
نیسلے دنیا کی سب سے بڑی اشیائے خوردونوش کارپوریشن ہے، جس نے اپریل 2024 میں 265.57 بلین ڈالر کا بزنس کیا تھا۔
اس تحقیق میں کمپنی کی جانب سے کم اور درمیانی آمدنی والے ممالک میں فروخت کی جانے والی 150 مصنوعات کا جائزہ لیا گیا، جن میں سب سے زیادہ فروخت ہونے والے برانڈز ”Cerelac“ اور ”Nido“ شامل ہیں۔
تحقیق کیلئے ایشیا، لاطینی امریکہ اور افریقہ میں نیسلے کی بنائی گئی بچوں کی غذائی مصنوعات کے نمونے بیلجیم میں واقع ٹیسٹنگ لیبارٹری میں بھیجے گئے۔
پبلک آئی کے زراعت اور غذائیت کے ماہر لارینٹ گیبریل نے ”ٹائم ڈاٹ کام“ کو بتاتے ہوئے کہا کہ، ’ہم نے شوگر (چینی /شکر) کو اس لیے نشانہ بنایا کیونکہ جب غذائیت سے متعلق صحت کی بات آئے تو یہ پہلا دشمن ہے۔‘
انہوں نے کہا کہ ’بچوں اور نوزائیدہ بچوں کے ابتدائی عمر میں چینی کا استعمال بہت نقصان دہ ثابت ہوسکتا ہے۔ یہ موٹاپے کے بحران کے پیچھے اہم عوامل میں سے ایک ہے۔ اگر بچوں کو میٹھے کا استعمال کرنا پڑتا ہے، تو ان میں بنیادی طور پر بعد میں موٹاپے کا شکار ہونے کا زیادہ خطرہ ہوگا اور وہ صحت کے منفی نتائج جیسے ذیابیطس، ہائی بلڈ پریشر، اور دیگر دائمی بیماریوں سے دوچار ہوں گے۔‘
جانچ کے نتائج سے معلوم ہوا کہ ان خطوں میں نیسلے کی طرف سے ”تقریباً تمام“ گندم پر مبنی سریلیک سیریلز، جو چھ ماہ کی عمر کے بچوں کیلئے ہوتے ہیں، ان میں چینی شامل ہے جو اوسطاً 4 گرام یا ایک شوگر کیوب فی خوراک کے برابر ہے۔
نیسلے کے ایک پروڈکٹ میں شامل چینی کی سب سے زیادہ مقدار، فی خوراک 7.3 گرام فلپائن میں پائی گئی، اس کے بعد نائجیریا میں 6.8 گرام اور سینیگال میں 5.9 گرام پائی گئی۔ مزید برآں، 15 میں سے سات ممالک نے مصنوعات کے لیبل پر یہ واضح نہیں کیا کہ اس میں چینی شامل کی گئی ہے۔

دریں اثناء ایک سے تین سال کی عمر کے بچوں کے لیے بنائے گئے نیڈو پاؤڈر دودھ میں فی خوراک تقریباً دو گرام اضافی چینی ہوتی ہے، پاناما میں دودھ کے پاؤڈر میں چینی کی بلند ترین سطح 5.3 گرام تھی۔ اس کے بعد نکاراگوا میں 4.7 گرام چینی فی خوراک اور میکسیکو میں 1.8 گرام پائی گئی۔
پبلک آئی اور IBFAN نے پایا کہ نیسلے کے آبائی ملک سوئٹزرلینڈ کے ساتھ ساتھ جرمنی، برطانیہ اور فرانس کی دیگر بڑی یورپی منڈیوں میں چینی کو مساوی مصنوعات میں شامل نہیں کیا گیا۔
رپورٹ میں اس کو نسلی اور عوامی صحت کے نقطہ نظر سے ’دوہرا معیار‘ قرار دیا گیا ہے ’جو کہ بلا جواز اور پریشانی کا باعث ہے‘۔
اس وقت دنیا بھر میں ایک ارب سے زیادہ لوگ موٹاپے کا شکار ہیں۔
ٹائم کو ایک بیان میں، نیسلے کے ترجمان نے کہا کہ ’بے بی فوڈ ایک انتہائی منظم زمرہ ہے۔ ہم جہاں بھی کام کرتے ہیں، ہمارا پورٹ فولیو مقامی قواعد و ضوابط یا بین الاقوامی معیارات کی تعمیل کرتا ہے، بشمول لیبلنگ کی ضروریات اور کاربوہائیڈریٹ مواد پر حدیں جو شکر پر مشتمل ہوتی ہیں۔‘
گیبریل کا کہنا ہے کہ یہ سمجھنا مشکل ہے کہ کس پروڈکٹ میں کتنی چینی شامل کی جاتی ہے، کیونکہ زیادہ تر مینوفیکچررز صرف چینی کے کل مواد کو ظاہر کرتے ہیں، جس میں پھلوں اور سبزیوں میں پائی جانے والی ’بنیادی طور پر بے ضرر‘ قدرتی شکر شامل ہو سکتی ہے۔
انہوں نے کہا کہ بھارت، بنگلہ دیش، تھائی لینڈ، انڈونیشیا، اور جنوبی افریقہ ایسی قومیں ہیں جو سریلیک بیبی سیریلز میں شامل شکر کا باضابطہ لیبل پر لکھتے ہیں، جب کہ برازیل، پاکستان، فلپائن، نائجیریا، سینیگال جیسے ممالک میں ایسا نہیں کیا جاتا۔
ورلڈ ہیلتھ آرگنائزیشن (ڈبلیو ایچ او) کے یورپی رہنما خطوط تجویز کرتے ہیں کہ تین سال سے کم عمر بچوں کے کھانے میں کوئی شکر یا مٹھاس والے ایجنٹوں کا استعمال نہیں کرنا چاہیے۔
دریں اثناء امریکی حکومت کے رہنما خطوط تجویز کرتے ہیں کہ دو سال سے کم عمر کے بچوں کو اضافی شکر سے پرہیز کرنا چاہیے، اور برطانیہ اس حد کو چار سال سے کم عمر کے بچوں پر نشان زد کرتا ہے۔
گیبریل کا کہنا ہے کہ دنیا بھر میں بچوں کے لیے چینی کے جلد استعمال سے بچنے کے لیے اتفاق رائے بڑھ رہا ہے۔
گیبریل کہتے ہیں، ’نیسلے کے ایسا کرنے کی واحد وجہ بنیادی طور پر یہ ہے کہ وہ جانتے ہیں بچوں کو شوگر پسند ہے اور وہ بار بار ان کی مصنوعات چاہیں گے۔‘
انہوں نے کہا کہ ’ان کا مقصد صرف اپنی مصنوعات کی فروخت میں اضافہ کرنا ہے۔‘
نیسلے کا کہنا ہے کہ اس نے پچھلی دہائی کے دوران بچوں کے اناج کے اپنے عالمی پورٹ فولیو میں شامل چینی کی مقدار میں 11 فیصد کمی کی ہے۔
نیسلے ترجمان کا کہنا ہے کہ نیسلے کی مصنوعات میں شامل کُل شکر کا اعلان کیا جاتا ہے اور یہ کہ Nido اور Cerelac مصنوعات میں قواعد و ضوابط اور مقامی اجزاء کی دستیابی کی وجہ سے ’ترکیب میں معمولی تبدیلیاں‘ ہوتی ہیں۔
پبلک آئی اور IBFAN کی رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ اثر انگیز مارکیٹنگ ایک بڑی حکمت عملی تھی جسے نیسلے نے استعمال کیا تھا۔
گیبریل نے کہا کہ کمپنی معاوضہ شراکت میں ’ماں پر اثر انداز ہونے والوں‘ اور صحت کے ماہرین کا استعمال کرتی ہے جو اوسط صارف کو ’گمراہ‘ کرتے ہیں۔
گیبریل نے یہ بھی نوٹ کیا کہ ادا شدہ شراکتیں روایتی اشتہاری طریقوں کے مقابلے میں ماہرانہ مشورے کی طرح نظر آتی ہیں۔
گیبریل کا کہنا ہے کہ ’آپ کو آن لائن سوشل میڈیا نیوٹریشنسٹ، ماہرین اطفال، ڈاکٹرز ملیں گے، جو Nestlé کی مصنوعات، NIDO اور Cerelac مصنوعات کو بچوں کے لیے صحت مندانہ طور پر فروغ دیتے ہیں، کہ یہ ان کی قوت مدافعتاور دماغی نشوونما کے لیے کتنے اچھے ہیں‘۔

Views= (411)

Join on Whatsapp 1 2

تازہ ترین